ہر پاکستانی کی خبر

عدالت کے گیٹ پر احتجاج انصاف کی راہ میں رکاوٹ کے مترادف ہے، چیف جسٹس

Image Source - Google | Image by
Dunya Urdu
چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا ہے کہ عدالت کے باہر احتجاج کرنا انصاف میں رکاوٹ ڈالنے کے مترادف ہے۔
 

چیف جسٹس پاکستان عمر عطا بندیال کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے سپریم کورٹ کے ریویو آف آرڈرز اینڈ ججمنٹ ایکٹ اور الیکشن کمیشن کی جانب سے پنجاب میں انتخابات کے عدالتی حکم پر نظرثانی کے خلاف دائر درخواستوں کی سماعت کی۔

سماعت شروع ہوئی تو چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیئے کہ ہمیں کچھ درخواستیں موصول ہوئی ہیں، ریویو ایکٹ کے معاملے کو کسی مرحلے پر دیکھنا ہے، اٹارنی جنرل کو آگاہ کر دیا ہے، نظرثانی پر نوٹس کے بعد معاملہ آگے بڑھے گا۔ . ایکٹ جانچ پڑتال کی جائے. زیریں بنچ الیکشن کیس ایکٹ کی سماعت کرے گا، جناب علی ظفر نظر ثانی ایکٹ پر بھی اپنا موقف دیں گے۔

تحریک انصاف کے وکیل بیرسٹر علی ظفر نے کہا کہ سپریم کورٹ ریویو ایکٹ آئین کے خلاف ہے، پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ میں بھی یہی معاملہ اٹھایا گیا۔ حکم امتناعی نظر ثانی ایکٹ پر بھی لاگو ہوتا ہے، پنجاب سپریم کورٹ الیکشن ری ویژن کیس کی سماعت کر سکتی ہے، حکم امتناعی کی وجہ سے سپریم کورٹ نظر ثانی ایکٹ کا اطلاق اس عدالت پر نہیں ہوتا، عدالت فیصلے پر روک لگا سکتی ہے۔ الیکشن کا جائزہ۔ نظرثانی شدہ ایکٹ پر فیصلہ زیر التواء ہے۔ جی ہاں، الیکشن ریویژن کیس میں دلائل تقریباً ختم ہو چکے ہیں، کیس اب ختم ہونا چاہیے۔

سپریم کورٹ کا نظرثانی ایکٹ نافذ ہوا تو عدالت پنجاب الیکشن کیس کی سماعت کیسے کرے گی؟ جسٹس منیب اختر

جسٹس منیب اختر نے کہا کہ نظرثانی ایکٹ نافذ ہوا تو الیکشن کمیشن کے وکیل کو لارجر بنچ میں دوبارہ دلائل دینے ہوں گے۔ سپریم کورٹ کا نظرثانی ایکٹ نافذ ہوا تو عدالت پنجاب الیکشن کیس کی سماعت کیسے کرے گی؟ بتائیں کہ پنجاب الیکشن ریویو کیس میں سپریم کورٹ ریویو ایکٹ کیسے لاگو نہیں ہوتا؟

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ پنجاب الیکشن نظرثانی کیس کا فیصلہ سب چاہتے ہیں، الیکشن کمیشن کے وکیل نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ان کے پاس وسیع اختیارات ہیں، اپیلوں کی بھی کچھ حدیں ہوتی ہیں، پنجاب الیکشن نظرثانی کیس نیا نہیں ہے۔ . بحث ہو چکی ہے، الیکشن کمیشن کے وکیل کے دلائل نظرثانی کا دائرہ وسیع کرنے پر تھے، انتخابی نظرثانی کیس لارجر بنچ میں جاتا ہے تو الیکشن کمیشن کے وکیل وہاں سے دلائل شروع کر سکتے ہیں۔

عدالتی فیصلہ تاریخ میں لکھا جائے گا کہ 90 دن میں انتخابات لازمی ہیں، چیف جسٹس

 

چیف جسٹس نے کہا کہ انتخابات کا معاملہ قومی مسئلہ ہے، 14 مئی کے فیصلے پر عملدرآمد ممکن نہیں، لیکن یہ فیصلہ تاریخ بن چکا ہے، عدالتی فیصلہ تاریخ میں رہے گا کہ 90 دن میں انتخابات لازمی ہیں۔ 90 دن کی توسیع ہو سکتی ہے، کیا 9 مئی کے واقعات کے بعد کے حالات آئین میں الیکشن ملتوی کرنے جیسے ہیں؟ تشدد اور طاقت سب کچھ نہیں کر سکتی۔

 

15 مئی کی رات مجھے لگا کہ آئین مر چکا ہے: بیرسٹر علی ظفر

پی ٹی آئی کے وکیل بیرسٹر علی ظفر نے پنجاب الیکشن ریویو کیس کا فیصلہ کرنے کی استدعا کرتے ہوئے کہا کہ حالات یا دلائل کچھ بھی ہوں، پنجاب عدالت پنجاب الیکشن ریویو کیس کا فیصلہ جلد کرے۔ 15 مئی کی رات میں نے محسوس کیا کہ آئین مر گیا، 15 مئی کے الیکشن کی ڈیڈ لائن اور سپریم کورٹ کے فیصلے کی توہین کی گئی۔ ہر روز ایسا محسوس ہوتا ہے کہ آئین کا قتل ہو گیا ہے۔ وزیراعظم، چیف جسٹس سمیت سب نے آئین کو برقرار رکھنے کا حلف اٹھایا ہے، الیکشن کمیشن کے وکلاء جو بھی دلائل دیں گے۔ لیکن اس سے حقیقت نہیں بدلے گی۔

بیرسٹر علی ظفر نے کہا کہ جب ریویو ایکٹ پاس ہوا تو آپ نے سینیٹ میں کہا کہ آپ ایسا قانون کیسے بنا رہے ہیں جو آئین کے خلاف ہے۔ نظرثانی ایکٹ سینیٹ نے بغیر کسی بحث کے 5 منٹ میں منظور کرلیا۔ آرٹیکل 184-3 میں ترامیم یقیناً اچھی ہیں لیکن یہ آئینی ترامیم سے ہی ممکن ہے۔ عدلیہ کی آزادی سے متعلق قوانین آئینی ترامیم کے ذریعے ہی بنائے جا سکتے ہیں۔

چیف جسٹس نے پوچھا کہ کیا آپ سمجھتے ہیں کہ حکومت نے آرٹیکل 184-3 میں اپیل کا حق دیا ہے جو کہ آئین کے خلاف ہے؟ بیرسٹر علی ظفر نے کہا کہ جو نکات مرکزی کیس میں نہیں اٹھائے گئے ان کا جائزہ نہیں لیا جا سکتا۔

چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ آرٹیکل 184-3 سے متعلق قانون میں اچھی ترامیم ہیں، ان سے غلطی صرف یہ ہوئی کہ انہوں نے آرٹیکل 184-3 پر نظرثانی کو قابل سماعت بنایا۔ اٹارنی جنرل سے پوچھا جائے گا کہ حکومت نے غلطی کیوں کی۔

اٹارنی جنرل نے جواب دیا کہ سپریم کورٹ ریویو ایکٹ کے خلاف درخواست گزار ذاتی حیثیت میں ہیں، علی ظفر کیس میں فریق بننا چاہتے ہیں تو درخواست دائر کریں۔

ہمارے کام میں مداخلت حق میں مداخلت ہے، چیف جسٹس

 

چیف جسٹس نے کہا کہ وقت بچانے کا کوئی طریقہ بتائیں۔ اچھی بات یہ ہے کہ حکومت اور سرکاری اداروں نے قانون پر عمل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ آج حکومت کی سوچ ریاضی پر نہیں بلکہ قانون اور حقائق پر مبنی ہے۔ حکومت کی اچھی قانون سازی کو سراہتے ہیں، حکومت گیٹ پر احتجاج کر رہی تھی، کیا احتجاج کا مطلب رکاوٹ ہے؟

 

ریویو آف آرڈرز اینڈ ججمنٹ ایکٹ سے متعلق سپریم کورٹ کے کیس میں شامل فریقین کو نوٹسز بھیج دیے گئے ہیں۔

 

سپریم کورٹ میں ریویو آف آرڈرز اینڈ ججمنٹ ایکٹ کے خلاف درخواستوں کی سماعت کے دوران زمان خان وردگ اور غلام محی الدین کی جانب سے بیرسٹر علی ظفر کے دلائل دیے گئے۔

درخواستیں سپریم کورٹ کے ریویو آف آرڈرز اینڈ ججمنٹ ایکٹ کے خلاف ہیں کیونکہ درخواست گزاروں کا ماننا ہے کہ آئینی ترمیم کے بغیر نظرثانی کے دائرہ کار کو بڑھانا غیر قانونی ہے۔ ایک نظرثانی بینچ پہلے ہی سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے تحت حکم امتناعی کا حکم دے چکی ہے اور دونوں مقدمات کی منگل کو ایک ساتھ سماعت کی جائے گی۔

سپریم کورٹ کے ریویو آف آرڈرز اینڈ ججمنٹ ایکٹ کیس کی وجہ سے عدالت کی جانب سے اٹارنی جنرل، پارٹی صدر، وفاقی حکومت اور وزارت پارلیمانی امور کو نوٹس بھجوا دیے گئے۔

چیف جسٹس پاکستان نے اعلان کیا کہ بحالی کیس کے علاوہ منگل سے پنجاب الیکشن کیس کی روزانہ سماعت کی جائے گی۔

عدالت نے پنجاب الیکشن کیس اور نظرثانی ایکٹ کی درخواستوں کو یکجا کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے سماعت آئندہ منگل (13 جون) تک ملتوی کر دی۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

تازہ ترین

ویڈیو

Scroll to Top

ہر پاکستانی کی خبر

تازہ ترین خبروں سے باخبر رہنے کے لیے ابھی سبسکرائب کریں۔