ہر پاکستانی کی خبر

8 جون تک عمران خان کی 8 مقدمات میں عبوری ضمانت منظور

Image Source - Google | Image By
urdu.geo.tv

اسلام آباد کی انسداد دہشتگردی عدالت (اے ٹی سی) نے 8 جون تک عمران خان کی 8 مقدمات میں عبوری ضمانت منظور کرلی۔

مختلف تھانوں میں توڑپھوڑ، جلاؤ گھیراؤ اور دفعہ۱۴۴ کی خلاف ورزی کے درج مقدمات پر عمران خان آج انسداد دہشتگردی عدالت میں پیش ہوئے۔

اے ٹی سی جج راجہ جواد عباس نے عمران خان کی درخواست ضمانت کی سماعت کی۔

کیس کی سماعت اے ٹی سی کے جج راجہ جواد عباس کی جانب سے کی گئ۔

عمران خان کے وکیل سلمان صفدر کا کہنا تھا کہ عمران خان کے خلاف ۸ کیسز ہیں، عمران خان کو شدید سکیورٹی خدشات ہیں، تمام مقدمات میں جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم بنائی گئی ہے جس میں عمران خان شامل تفتیش ہوئے ہیں، عمران خان کو کوئی انا کا مسئلہ نہیں، اگر کوئی دیگر تفتیش چاہیے تو عمران خان شامل تفتیش ہونے کے لیے تیار ہیں۔

وکیل سلمان صفدر کا کہنا تھا کہ عمران خان سے کوئی سوال کرنا ہے تفتیشی افسر نے تو آج کرلیں، ۸ کیسز میں آئندہ تاریخ پر معاونت کرنےکو تیار ہوں۔

جج راجہ جوادعباس نے ہدایت کی کہ آج دلائل مکمل کرلیں۔ وکیل سلمان صفدر کا کہنا تھا کہ عمران خان اور بشریٰ بی بی نے نیب راولپنڈی جانا ہے، عمران خان کی ۸ مقدمات میں ضمانت منظور کی جائے، ہماری استدعایہی ہےکہ کمرہ عدالت میں ہی شامل تفتیش کیا جائے۔

اے ٹی سی جج کا کہنا تھا کہ آپ تو ایک کیس میں شامل تفتیش ہوچکے اسی پر دلائل دے دیں۔

پراسیکیوٹر عدنان علی کا کہنا تھا کہ ۴ مقدمات میں جےآئی ٹی بنی ہے، اسلام آباد ہائی کورٹ کا عدالتی حکم نامہ پیش کیا،۲۷ مارچ کو ایک ہی حکم نامہ ہوا، نوٹسز ہوتے رہے، ۶ اپریل، ۱۸ اپریل کو پیش ہوں، لیکن عمران خان پیش نہیں ہوئے،۳ مئی کو کہا کہ اگلی تاریخ پر لازمی پیش ہوں لیکن شامل تفتیش نہیں ہوئے، پھر کہا گیا کہ ٹانگ خراب ہے، عمران خان پیش نہیں ہو سکتے، عدالت سے استدعا ہےکہ ہدایت دیں کہ عمران خان مقدمات میں شامل تفتیش ہوں۔

وکیل سلمان صفدر کا کہنا تھا کہ جے آئی ٹی سے سوالنامہ دینے یا ویڈیولنک پرشامل تفتیش ہونےکا کہاگیا، عمران خان کی عدالت پیشیوں پر پیسے لگتے ہیں کیونکہ کیسز بے انتہا ہیں۔

جج نے استفسار کیا کہ پنجاب کے جو مقدمات تھے ان میں جے آئی ٹی نے کیسے کام کیا؟

وکیل سلمان صفدر نے بتایا کہ جے آئی ٹی بنائی گئی اور پوری جے آئی ٹی زمان پارک میں آئی اور شامل تفتیش کیا گیا۔

جج کا کہنا تھا کہ جب عمران خان پولیس لائنز میں موجود تھے تو کیوں شامل تفتیش نہیں کیا؟ عدالت سے فیصلہ لیتے اور پولیس لائنز میں عمران خان کو شامل تفتیش کرلیتے، اسلام آباد کی جے آئی ٹی نے شامل تفتیش کیوں نہیں کیا؟

وکیل سلمان صفدر کا کہنا تھا کہ پراسیکیوشن کی نیت خراب ہے، تفتیش کرنا ہی نہیں چاہتے، ۷۱ سال کا شخص ۱۴۰ سے زائد مقدمات میں شامل تفتیش ایک ساتھ کیسے ہوسکتا ہے۔

اس دوران عمران خان نےجج کے شامل تفتیش ہونے سے متعلق سوال پر اٹھ کر وکیل کے ساتھ سرگوشی کی، ان کا کہنا تھا کہ مجھے سکیورٹی تھریٹس تھےکیسے شامل تفتیش ہوتا؟ وکیل سلمان صفدر کا کہنا تھا کہ سیدھی بات ہے، سوالنامہ دیں، ہم تفتیش میں شامل ہوجائیں گے۔

عمران خان اپنی نشست سے اٹھ کر روسٹرم پر آگئے اور کہا کہ مجھ پر وزیرآباد میں قاتلانہ حملہ ہوا، دوسرا حملہ جوڈیشل کمپلیکس میں ہونے والا تھا، گھر سے نکلتاہوں تو ذہن میں یہی ہوتا کہ قاتلانہ حملہ ہوگا، وزیرداخلہ نے خود کہا کہ میری جان کو خطرہ ہے، میری عدالتی پیشیوں پر سسٹم رک جاتاہے، جیسے لاہور ہائی کورٹ نے کہا ویسے مجھے شامل تفتیش کردیں۔

جج نے سوال کیا کہ اسلام آباد کی جے آئی ٹی کہاں ہے؟ اگر تفتیش کرنی ہے تو عدالت میں موجود کیوں نہیں؟ جے آئی ٹی اسلام آباد عدالت کو بتائے کہ کیسے شامل تفتیش کرناچاہتے ہیں، سنجیدگی کا یہ حال ہےکہ عدالت میں ہی موجود نہیں، آدھے گھنٹے میں عدالت پیش ہوں۔

تاہم عدالت نے ۸ جون تک عمران خان کی ۸ مقدمات میں عبوری ضمانت منظور کرلی۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

تازہ ترین

ویڈیو

Scroll to Top

ہر پاکستانی کی خبر

تازہ ترین خبروں سے باخبر رہنے کے لیے ابھی سبسکرائب کریں۔