ہر پاکستانی کی خبر

نینو ٹیکنالوجی سائنس کاایک دلکش پہلوہے۔

Image Source - Google | Image by
Dunya Urdu

جدید ٹیکنالوجی اور نئی سائنسی ایجادات کی وجہ سے دنیا تیزی سے تبدیل ہو رہی ہے جس میں نینو ٹیکنالوجی کا شعبہ روز بروز اہمیت اختیار کر رہا ہے۔

"نینو ٹیکنالوجی” کا جنم اس وقت ہوا جب یہ پتہ چلا کہ مادے کی خصوصیات میں دلچسپ تبدیلیاں اس وقت ہوتی ہیں جب اس کا حجم اتنا چھوٹا ہو جاتا ہے کہ انسانی آنکھ اسے نہیں دیکھ سکتی۔ مثال کے طور پر، اگر آپ سونے کے ذرات کو نینو میٹر کے پیمانے پر پیستے ہیں، تو ان ذرات کے سائز پر منحصر ہے، سونا۔

نینو ٹیکنالوجی کو سائنس کے مختلف شعبوں میں استعمال کیا جا رہا ہے جیسے بائیو میڈیسن، کیمسٹری، مکینیکل میٹریل سائنس، اور نانوسکل سینسر اور آلات۔ اسے سڑک پر ڈرائیوروں کی مدد کے لیے نقل و حمل میں بھی استعمال کیا جا رہا ہے، تصادم اور ٹریفک سے بچنے کے لیے مدد فراہم کی جا رہی ہے۔

نانوسینسرز نے کاشتکاری میں درکار پانی، کھاد اور کیڑے مار ادویات کی مقدار کو کم کرنے میں مدد کی ہے۔ کیڑے مار دوا کے استعمال کو زیادہ موثر بنانے کے لیے، سائنسدانوں نے نینو کیپسول بنائے ہیں جو کیڑے مار دوا صرف اس وقت خارج کرتے ہیں جب کیڑے کے پیٹ میں ہوتے ہیں، پودوں اور انسانوں کو نقصان سے بچاتے ہیں۔

نینو ٹیکنالوجی کو مختلف شعبوں میں لاگو کیا جا رہا ہے، بشمول پانی صاف کرنے، ادویات، الیکٹرانکس، اور نئے مواد کی ترقی۔ مزید برآں، نینو سیلولوز کاغذ سے بنی بلٹ پروف جیکٹس تیار کی گئی ہیں، جو ہلکے اور گولیوں کو جذب کرنے کے قابل ہیں۔

توانائی کے شعبے کو نئے اور موثر شمسی خلیوں کی ترقی کے ساتھ تیزی سے ترقی کا سامنا ہے جو سورج کی روشنی کے ساتھ ساتھ برقی گاڑیوں کے سامنے آنے پر بجلی پیدا کرتے ہیں۔ تحقیق صنعت کو طاقت دینے کے لیے بہتر بیٹریاں بنانے پر مرکوز ہے، اور ممالک اپنے کاروبار اور صنعتوں کے لیے ان اختراعات کو اپنا رہے ہیں۔

کمپیوٹر سسٹمز میں حیاتیاتی ماڈلز کا استعمال تیزی سے بڑھ رہا ہے، جس میں 2016 اور 2020 کے درمیان 67 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ گوگل، مائیکروسافٹ، اور انٹیل اس میدان میں سر فہرست ہیں۔ مشین لرننگ، کوانٹم کمپیوٹنگ، اور خود مختار ٹیکنالوجی میں بھی نمایاں اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے۔ پاکستان میں "پاک آسٹریا یونیورسٹی آف اپلائیڈ سائنس اینڈ انجینئرنگ” کا قیام اور سیالکوٹ میں اسی طرح کی یونیورسٹی کی تعمیر اس ترقی کی مثالیں ہیں۔

اس کے علاوہ، ٹیکنالوجی میں ہونے والی ترقی نے اشیاء کو پوشیدہ ہونے کی اجازت دی ہے جب ڈھانپ لیا گیا اور ایسے آلات بنائے گئے جو نابینا افراد کے دماغوں کو بصری معلومات بھیج سکتے ہیں، جس سے ان کی نظر کی جزوی بحالی ہوتی ہے۔ 

مصنوعی ذہانت کی ترقی مختلف شعبوں میں پھیل رہی ہے جیسے نقل و حمل، ادویات، مالیات، اور ماحولیاتی خدشات۔ ٹیکنالوجی تیزی سے ترقی کر رہی ہے اور انسانی سوچ کے عمل پر مبنی دیگر شعبوں میں اس کا اطلاق بھی تیزی سے بڑھ رہا ہے۔

پاکستان نے مصنوعی ذہانت کے لیے متعدد مراکز قائم کیے ہیں جن میں چین اور آسٹریا کی یونیورسٹیوں کے ساتھ اشتراک بھی شامل ہے۔ مزید برآں، جامعہ کراچی میں ملک کا پہلا قومی مرکز برائے نینو ٹیکنالوجی قائم کیا گیا ہے، جو باصلاحیت نوجوانوں کو جدید ترقی سے ہم آہنگ رہنے کے مواقع فراہم کرتا ہے۔

جیسا کہ نینو ٹیکنالوجی اور مصنوعی ذہانت عالمی سطح پر تیزی سے پھیلتی جارہی ہے، صرف ان ممالک کو ہی مستقبل میں ترقی یافتہ سمجھا جائے گا۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

تازہ ترین

ویڈیو

Scroll to Top

ہر پاکستانی کی خبر

تازہ ترین خبروں سے باخبر رہنے کے لیے ابھی سبسکرائب کریں۔