ہر پاکستانی کی خبر

عاصمہ شیرازی جنرل باجوہ کے بارے میں کالم لکھتی ہیں مُرشدوں کے مُرشد جنرل باجوہ!

Image Source - Google | Image by
BBC News

پاکستان ایک ایسے دلچسپ دور سے گزرا ہے جو شاید اب بھی جاری ہے اور اسے تاریخ میں "مزاحیہ دور” کے نام سے یاد رکھا جائے گا۔

ہم ایک ایسے دور میں رہ رہے ہیں جہاں افراتفری پھیلتی جا رہی ہے اور پیاز کی تہوں کی طرح نئی معلومات پیدا ہوتی رہتی ہیں۔

عمران سیریز کی کہانیاں اور باجوہ نامہ کے اقتباسات ابھی تک جاری ہیں، اور انٹرویو لینے والوں کی رائے سامعین کے ردعمل سے الگ ہے۔

چوراہے پر ہانڈی یا چوراہے سے بغیر کسی فکر کے ہانڈی بڑھ رہی ہے۔ ایک پنجابی کہاوت ہے جس سے مراد ایسی صورت حال ہے جہاں دو جماعتیں ایک دوسرے کے مخالف جگہوں پر چلی گئی ہوں جو ہماری موجودہ صورتحال سے ملتی جلتی ہے۔

کپتان کو اس وقت دکھ کا سامنا ہے کیونکہ انہوں نے جنرل باجوہ کی اسمبلیاں توڑنے کی سفارش پر عمل کیا اور اب انہوں نے ایک احمقانہ فیصلہ کیا ہے جس پر انہیں کوئی پشیمانی محسوس نہیں ہوتی۔

آرٹیکل قارئین کو یاد دلاتا ہے کہ جنرل عاصم منیر کے آرمی چیف بننے سے عین قبل اسمبلیاں تحلیل کر دی گئی تھیں، اسی وقت جنرل باجوہ کی توسیع اور عمران خان کے ممکنہ طور پر تاحیات آرمی چیف رہنے کے بارے میں اعلانات ہوئے۔ ان واقعات کو ایک ساتھ پڑھنے سے صورتحال کو مزید واضح طور پر سمجھنے میں مدد ملتی ہے۔

جنرل باجوہ نے توسیع کے لیے رہنمائی کی پیشکش کی، جب کہ خان صاحب نے آئندہ انتخابات میں نمایاں اکثریت کی توقع ظاہر کی۔

رہنما دسمبر 2022 تک جنرل باجوہ سے رہنمائی کے خواہاں تھے، لیکن حکمران جماعت نے ان کی کوششوں میں خلل ڈالا اور کسی بھی موثر حکمت عملی کو روک دیا۔

Image Source - Google | Image by
BBC News

اسمبلیوں کو تحلیل کرنے کا منصوبہ بہت طاقتور تھا اور ممکنہ اکثریت کے ساتھ دو صوبوں میں عمران خان کی کامیابی کا باعث بن سکتا تھا، لیکن موجودہ حکمرانوں کے مشیر اس کا مقابلہ کرنے میں کامیاب رہے۔ تاہم، ابھی مزید چیلنجز پر قابو پانا باقی ہے۔

اگر ساس بہو کی آڈیو لیک ہو جائے تو بھی اس محبت کی کہانی کا مرکزی کردار موجود ہے۔ محبت کی کہانی میں شروع سے لے کر آخر تک کئی اتار چڑھاؤ آئے لیکن اب اس رشتے کے نئے مراحل ہیں جہاں محبوب پرانے دنوں کو یاد کر کے جذباتی ہو رہا ہے۔

مرشد باجوہ کے سیاسی کارنامے اتنے متاثر کن ہیں کہ پاکستان انہیں نظر انداز نہیں کر سکتا، اور عمران خان نے اپنے سویلین قائدانہ کردار کو غیر معمولی انداز میں نبھایا ہے۔

سیاسی بابوں میں جنرل باجوہ کا نام لکھنے کے لیے کون سے حروف استعمال کیے جائیں؟ شیر اور درخت کے موضوع کی طرف چلتے ہیں جہاں شیر عمران خان کی نمائندگی کرتا ہے۔

اپنی مایوسی سے آگے بڑھنے کے لیے، عمران خان کو عملی سیاست پر توجہ دینے کی ضرورت ہے اور اپنے بیانیے کے ذریعے مقبولیت حاصل کرنے میں جنرل باجوہ کے کردار کو تسلیم کرنے کی ضرورت ہے۔ تاہم، اس بیانیہ کے کچھ پہلوؤں کی منصوبہ بندی نہیں کی گئی تھی اور انہیں الگ سے نمٹا جانا تھا۔

 

اگرچہ تمام محبت کی کہانیوں کا انجام خوشگوار نہیں ہوتا ہے اور اکثر اس کا نتیجہ عدالتی مقدمات میں ہوتا ہے، لیکن عدالت کی اس طرح کے مقدمات کو سنبھالنے کی اہلیت ان کی اپنی محبت کا ثبوت ہے۔ محبت کی کہانی کا نتیجہ غیر متوقع ہے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

تازہ ترین

ویڈیو

Scroll to Top

ہر پاکستانی کی خبر

تازہ ترین خبروں سے باخبر رہنے کے لیے ابھی سبسکرائب کریں۔